مزید خبریں

مسجد اقصیٰ میں 60 ہزار سے زائد فلسطینیوں نے نماز عیدادا کی

عید الفطر کے روز 60 سے زائد فلسطینی نمازیوں نے قابض اسرائیل کی کھڑی کی گئی رکاوٹوں کے باوجود مسجد اقصیٰ میں عید الفطر کی نماز ادا کی۔مقبوضہ بیت المقدس کے پرانے شہر میں عید کی نماز میں شرکت کے لیے صبح سویرے سے ہی بڑی تعداد میں شہری جمع ہوئے۔ مقبوضہ بیت المقدس میں محکمہ اوقاف اسلامی نے بتایا کہ قابض حکام کی جانب سے مسجد اقصیٰ سے زبردستی نکالے گئے شہریوں نے مسجد کے اطراف کی گلیوں میں نماز عید ادا کی۔

غزہ میں عید الفطر کا دوسرا روز
اسرائیلی فوج نے عیدالفطر کے دوسرے روز بھی غزہ کی پٹی میں کئی مقامات پر بمباری کی۔ اس دوران اسرائیلی فوج نے غزہ میں 2مساجد، 2 اسکولوں اور 2بازاروں کو نشانہ بنایا۔ نصیرات کے نئے کیمپ میں معاذ بن جبل اور ذوالنورین ؎مساجد پر بمباری ؎کے نتیجے میں مسجد کا مؤذن شہید ہوگیا۔؎قابض فوج نے یو این آر ڈبلیو اے ریلیف ایجنسی سے منسلک نصیرات پریپریٹری بوائز اسکول (سی) اور ملائیشیا کے اسکول پر میزائلوں سے بمباری کی جس کے نتیجے میں 3 دیگر بے گھر افراد شہید ہوگئے۔ مرکزی علاقے کے بازار پر بمباری میں 7 شہری شہید ہوئے۔ قابض فوج نے عیدالفطرکے موقع پر مسلمانوں کے جذبات کا احترام نہیں کیا بلکہ عید کے دوران بھی بمباری، ٹارگٹ کلنگ، قتل و غارت اور تباہی کی کارروائیاں جاری رکھی ہیں۔

غزہ میں عید الفطر کا تیسرا روز
عیدالفطرکے تیسرے روز غزہ کی پٹی پر اسرائیلی جارحیت سے شہادتوں کی تعداد 33 ہزار 634 شہید اور 76 ہزار 214 زخمی ہو گئی ۔فلسطینی وزارت صحت نے غزہ کی پٹی پر جارحیت کے نتیجے میں شہدا اور زخمیوں کی تعداد کے بارے میں اپنی روزانہ کی اعدادوشمار کی رپورٹ جاری کرتے ہوئے بتایا کہ 24 گھنٹوں کے دوران 89 فلسطینی شہید ہوئے ،جب کہ 120 زخمی اسپتالوں میں پہنچائے گئے۔اس طرح 7اکتوبر سے اب تک اسرائیلی جارحیت میں 33ہزار 634 شہید اور 76ہزار 214 زخمی ہوئے ہیں۔رپورٹ میں مزید کہا کہ کئی زخمی اب بھی ملبے کے نیچے اور سڑکوں پر ہیں۔ایمبولینس اور شہری دفاع کا عملہ ان تک نہیں پہنچ سکتا۔