مزید خبریں

باڈہ: سرکاری اسکول خستہ، اساتذہ اور طلبہ کی زندگیاں خطرے میں

باڈہ (نمائندہ جسارت) نواحی گاؤں راوت کھیڑو 2 کا پرائمری اسکول خستہ حالی کا شکار، اساتذہ اور طلبہ کی زندگیاں خطرے میں۔ محکمہ تعلیم نے بار بار شکایات کا نوٹس نہیں لیا، گاؤں کے مکینوں اور طلبہ و طالبات کا اسکول کے اندر احتجاج ، جبکہ ہیڈماسٹر اور دیگر اساتذہ ڈیوٹی سے غائب۔ تفصیلات کے مطابق نواحی گاؤں راوت کھیڑو کا پرائمری اسکول زبوں حال ہو گیا، چھت سے چاپڑ گرنے کی وجہ سے 114 طلبہ و طالبات میں بے چینی پھیلی ہوئی ہے۔ انہوں نے کہا کہ اسکول کا ہیڈماسٹر جمیل بٹ اور دیگر اساتذہ اکثر ڈیوٹی سے غائب رہتے ہیں، اسکول میں فرنیچر اور دیگر بنیادی سہولیات کی شدید کمی ہے۔ انہوں نے کہا کہ باہر ممالک میں رہنے والے گاؤں مکینوں سے مدد لے کر اسکول کا فرنیچر خریدا ہے، پھر بھی اساتذہ بچوں کو نہیں پڑھا رہے۔ انہوں نے کہا کہ اساتذہ کی غیر موجودگی اور خستہ حال بلڈنگ کے خلاف پہلے بھی کئی مرتبہ احتجاج کر چکے ہیں لیکن محکمہ تعلیم کے اعلیٰ افسران کے کانوں پر جوں تک نہیں رینگتی۔ انہوں نے وزیر محکمہ تعلیم اور دیگر اعلیٰ حکام سے مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اسکول کے ہیڈ ماسٹر جمیل بٹ کو ہٹا کر ایماندار اور فرض شناس استاد کو اسکول کا ہیڈ مقرر کرکے بچوں کی تعلیم کو تباہ ہونے سے بچایا اور اسکول کی بلڈنگ کی مرمت کروا کر طلبہ و طالبات میں پھیلی بے چینی ختم کی جائے۔