مزید خبریں

شدید گرمی میں بدترین بجلی بحران ،عوام پریشان،تجارتی سرگرمیاں متاثر

حیدرآباد (اسٹاف رپورٹر) حیدرآباد میں بدترین لوڈ شیڈنگ‘ شدید گرمی سے معصوم بچے بلبلااٹھے حیسکو نے ظلم کی انتہا کردی حیدرآباد کے بیشتر علاقوں میں بجلی کی غیر اعلانیہ بندش کا سلسلہ جاری ہے جس کے باعث عوام سخت اذیت کا شکار ہیں شہر کے اہم تجارتی مراکز‘ گاڑی کھاتہ‘ شاہی بازار‘ ریشم بازار‘ کھوکھر محلہ ‘ گول بلڈنگ‘ رسالہ روڈ‘ کے علاقہ لیاقت کالونی ‘ الیاس آباد‘ پریٹ آباد‘ ہیر آباد میں غیر اعلانیہ لوڈ شڈنگ نے کاروبارہ رباہ کرکے رکھ دیا مسلسل بجلی کی آنکھ مچولی سے اخبارات اور پرنٹنگ پریس میں کام بند لطیف آباد کے کئی علاقوں میں حیسکو کی جانب سے صبح سات بجے سے دوپہر بارہ بجے تک 25سے 30جون تک بجلی کی بندش کا اعلان کیا گیا تھا لیکن یہاں صبح سات بجے سے دوپہر دو بجے تک جبکہ معمول کی چھ گھنٹے کی بندش بھی کی جارہی ہے جس کے باعث لطیف آباد نمبر 4,5,10ودیگر یونٹ میں بارہ سے 14گھنٹے کی بجلی بند کی جارہی ہے شہر کے متعدد علاقوں میں ٹرانسفارمر خراب ہیں کوئی پوچھنے والا نہیں ہے جبکہ حیسکو کی جانب سے جون میں ریکوری دیکھانے کے لئے بل ادا کرنے والوں پر لوڈ ڈالا جارہا ہے مہنگائی‘ گرمی‘ بے روز گاری اور بجلی اور پانی کی بندش نے شہریوں کو ذہنی مریض بنادیا ہے انہوںنے وزیر اعظم سے اپیل کی کہ وہ نوٹس لیں حیدرآباد سندھ کا دوسرا بڑا شہر ہے جسے موجودہ اور ماضی کی حکومتوں نے لاوارث چھوڑدیا ہے ۔تاجر برادری کا کہنا ہے کہ جب حیسکو کی جانب سے بجلی کی فراہم نہیں کی جارہی تو پھر جلدی مارکٹیں بند کرانے کا کوئی جواز نہیں ہے ۔