مزید خبریں

شہباز حکومت نے اسٹیٹ بینک کے پیچھے چھپ کر دینی جذبات کو مجروح کیا،لیاقت بلوچ

لاہور(نمائندہ جسارت) نائب امیر جماعت اسلامی لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ شہباز شریف کی قیادت میں اتحادی حکومت نے سود کے خاتمے، وفاقی شریعت عدالت کے فیصلے کی روشنی میں لائحہ عمل دینے کے بجائے اسٹیٹ بینک اور سودی بینکوں کے پیچھے چھپ کر اسلامیان پاکستان کے دینی جذبات کو مجروح کیاہے۔ حکومت عوام کو تو ناراض کر چکی، لیکن اللہ کی ناراضگی ملک وملت کے لیے بہت مہلک ہو گی، وفاقی حکومت فوری طور پر عدالت عظمیٰ میں دائر پٹیشنز کے اقدامات روک دے، واپس لے اور پوری قوم عدالت عظمیٰ سے اپیل کرتی ہے کہ سودی نظام کی حفاظت کی غیر آئینی، قرآن وسُنت سے متصادم پٹیشنز کو مسترد کر دے اور حکومت کو پابند کرے کہ آئین کے مطابق قومی معیشت کو ربافری بنائے اور وفاقی شریعت عدالت کے فیصلے پر مرحلہ وار عملدرآمد کو یقینی بنائے۔ اسلام کا معاشی نظام ہی عالمی اداروں سے ڈائیلاگ اور قومی وقار آزاد وخود مختار پالیسی بنانے کا مضبوط چانس ہے۔ حکومت اپنی نااہلی، اسلام بے زاری، سودی قرضوں اور کرپشن کی تباہ کن عادات سے پاکستان کے لیے مشکلات پیدا نہ کرے۔ حکومت کو مساجد، مدارس، منبر ومحراب، چوکوں چوراہوں سے بڑی مزاحمت کا سامنا کرنا ہو گا۔لیاقت بلوچ نے ننکانہ صاحب، جھنگ، ٹوبہ ٹیک سنگھ اور سمندری سے جماعت اسلامی کے سیاسی انتخابی رہنماؤں اور کارکنان کے وفود سے ملاقات، لاہورریلوے اسٹیشن پر ٹرین مارچ کے موقع پر خطاب اور میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں بحرانوں کی دلدل کی اصل وجہ اللہ تعالیٰ کے اقتدار اعلیٰ، قرآن وسُنت کے نظام اور شفاف وغیر جانبدارانہ انتخابات سے انحراف ہے۔ ملک وملت کے بحرانوں کا علاج اسلام کی حکمرانی ہی ہے۔ جماعت اسلامی کا دوٹوک اعلان اور عزم ہے کہ وطن عزیز کی اسلامی نظریاتی، جغرافیائی اور ایٹمی صلاحیت کی ہر قیمت پر حفاظت کی جائے گی۔ عوام کو لاوارث نہیں چھوڑا جائے گا، عوامی مسائل پر پوری طاقت سے احتجاج اورآواز بلند کرتے رہیں گے۔ عوام منظم طاقت سے حالات کو بدلیں گے، اقتصادی بحرانوں کا علاج آئی ایم ایف، ورلڈ بینک، کشکول پھیلانے اور ذلت آمیز شرائط کے سامنے سرنڈر کرنے سے نہیں،سود کے خاتمے، اسلام کے معاشی نظام، خود انحصاری، خودداری، قومی وسائل، انسانی صلاحیتوں اور بیرون ملک پاکستانیوں کا اعتماد بحال کر کے ہی ممکن ہے۔