مزید خبریں

Jamaat e islami

حکمران خرچے کم کرنے کے بجائے مہنگائی میں اضافہ کر رہے ہیں، مولانا عبدالحق

کوئٹہ(نمائندہ جسارت )امیر جماعت اسلامی بلوچستان مولانا عبدالحق ہاشمی نے کہا ہے کہ حکمران اپنے خرچے کم کرنے کے بجائے عوام پر مہنگائی وٹیکسزکے ڈرون حملے کر رہے ہیں مہنگائی کے خلاف جماعت اسلامی بھرپور احتجاج کریگی۔عوام کی ہر پریشانی دکھ دردومسائل پر آوازاٹھانے والی پارٹی حقیقی اپوزیشن جماعت اسلامی ہے۔بدعنوانی ،آئی ایم ایف غلامی کی وجہ سے ایک ہفتے کے اندر 60 روپے اضافہ بدترین ظلم ہے ۔پیٹرولیم قیمتوں میں اضافے سے خوردنی اشیا کی قیمتوںمیں بھی ہوجاتاہے جس سے سب سے زیادہ غریب وکم آمدنی والے غریب طبقے متاثرہوتے ہیں ۔سرکاری اشرافیہ واسٹیبلشمنٹ پر مفت پیٹرول بند کیا جائے تولاکھوں تنخواہ لینے والوں کی طرف سے بھی چیخنے ،چلانے کی آوازیں آجائیں گی ۔ انہوں نے کہاکہ حکمرانوں کی غفلت ،کوتاہی، مسائل حل کرنے سے روگردانی کی وجہ سے بلوچستان کے عوام پریشان ہیں ۔حکومت واپوزیشن اور بااختیار طبقات مسائل کے ذمے دارہیں ۔غربت بے روزگاری سے نجات ،ترقی وخوشحالی کیلیے بلوچستان کے وسائل بلوچستان پر خرچ کرنے اوردیانت دار لوگوں کو آگے لانے ہوں گے۔ بلوچستان کے سلگتے مسائل وعوام کی پریشانیوں پر حکومت واپوزیشن اوربااختیارطبقات کی مجرمانہ خاموشی قابل مذمت ہے ۔اس حکومت میں بھی حکومت واپوزیشن عوام کے بجائے ایک دوسرے کا ساتھ دے رہے ہیں ۔ منشیات کے خاتمے ،اسلامی حکومت کے قیام ،بدعنوانی بے روزگاری کے خاتمے کیلیے جماعت اسلامی حقوق کے حصول کی تحریکیں چلارہی ہے ملک بھر اور بلوچستان میں حقوق کے حصول ،حکمرانوں کی غفلت وکوتاہی ،مسائل کو حل کرنے کی راہ ہموار کرنے کیلیے جماعت اسلامی کا عوامی احتجاج جاری ہے پیٹرولیم مصنوعات ،خوردنی اشیا کی قیمتوں میں اضافہ حکمرانوں کی لوٹ مار کے خلاف جماعت اسلامی احتجاج جاری رکھے گی عوام جماعت اسلامی کا ساتھ دیں تاکہ وعدل وانصاف کا اسلامی حکومت قائم ہوجائے ۔حکمرانوں نے بلوچستان کے نوجوانوں سمیت قوم کو مایوس اور مسائل ومشکلات کی طرف دھکیل دیا ہے۔ نااہل کرپٹ حکمرانوں کی وجہ سے پیٹرولیم مصنوعات میں اضافہ ہورہاہے منی بجٹ کے ذریعے عوام پر بجلی گرائی جاتی ہے۔ ملک کو آئی ایم ایف کی غلامی سے نکالنے کے لیے نوجوان متحد اور ملک میں غلامانہ و ظالمانہ نظام کی جگہ اسلامی نظام کے نفاذ کے لیے میدان میں نکلیں۔ نوجوان نہ صرف ملک کا قیمتی سرمایہ بلکہ تبدیلی نوید ہیں۔ بلوچستان کے لوگ روزگار تعلیم و صحت کیساتھ ساتھ پینے کے پانی اور بنیادی سہولیات سے بھی محروم ہیں۔ ملک و قوم اس وقت ظالمانہ نظام اور جاگیردارانہ و سرمایہ دارنہ سوچ کے حامل لوگوں میں پھنسے ہوئے اس نے نجات اور ترقی و خوشحالی کی طرف گامزن ہونے کے لیے نوجوانوں کو آگے بڑھ کر اپنا کردار ادا کرنا ہوگا۔ ظلم و ناانصافی کے خلاف اور اپنے حقوق کے لیے نوجوانوں کو اٹھ کھڑا ہونا پڑے گا۔ بڑے انقلاب و حقیقی تبدیلی کے لیے نوجوان جماعت اسلامی کے پلیٹ فارم پر متحد ہوجائیں۔ اسلامی پاکستان و خوشحال پاکستان بننے سے ہی بلوچستان بھی خوشحال ہوگااسی جدوجہد میں بلوچستان کے تمام مسائل کا حل ہے۔ مٹھی بھر جاگیردار و سرمایہ دار طبقے نے عوام کو یرغمال اور اپنا غلام بنا رکھا ہے۔