مزید خبریں

نصرتِ دین اور خواتین

…رحمت

…حلال کھاؤ

چینی مسلمانوں سے متعلق منفی خبریں تشویشناک ہیں،لیاقت بلوچ

اسلام آباد/لاہور(نمائندگان جسارت) سیکرٹری جنرل ملی یکجہتی کونسل و نائب امیر جماعت اسلامی لیاقت بلوچ نے کہا ہے کہ چین کے مسلمانوں کے بارے میں مختلف ذرائع سے منفی خبریں آتی رہتی ہیں، ہم سمجھتے ہیں کہ حقیقت حال کو واضح کرنے اور اس پروپیگنڈے کو زائل کرنے کے لیے دونوں ملکوں کے عوام کے مابین رابطے ضروری ہیں۔ اس مقصد کے لیے پاکستانی علما کا چین جا کر مسلمانوں سے ملنا اور ان کے حالات کو نزدیک سے دیکھنا نہایت مفید رہے گا۔ ملی یکجہتی کونسل کے وفد نے نائب امیر جماعت اسلامی لیاقت بلوچ کی سربراہی میں چین کے اسلام آباد میں موجود سفارتخانے کا دورہ کیا۔ وفد کے ارکان میں علما و مشائخ رابطہ کونسل کے سربراہ خواجہ معین الدین محبوب کوریجہ،اسلامی تحریک کے نائب صدر علامہ عارف حسین واحدی،جمعیت علما پاکستان (نورانی) کے سیکرٹری جنرل پیر محمد صفدر شاہ گیلانی،تحریک جوانان پاکستان کے چیئرمین محمد عبد اللہ گل، جماعت اہل حدیث کے امیر حافظ عبد الغفار روپڑی، نائب امیر جماعت اسلامی میاں محمد اسلم، جمعیت علما اسلام(سینئر) کے مرکزی رہنما پیر عبد الشکور نقشبندی،اسلامی جمہوری محاذ کے سربراہ حافظ زبیر احمد ظہیر، ملی یکجہتی کونسل اسلام آباد کے صدر انجینئر نصر اللہ رندھاوا اور سید ثاقب اکبر شامل تھے۔ وفد کی ملاقات چینی سفارت خانے کے قونصلر مسٹر ینگ ناؤسے ہو ئی۔ اس موقع پر سانحہ کراچی میں جاں بحق ہونے والے چینی اساتذہ اور دیگر واقعات میں دہشت گردوں کے ہاتھوں مارے جانے والے چینی انجینئرز اور ماہرین کے بہیمانہ قتل پر اظہار افسوس کیا گیا۔ تعزیتی کتاب میں لیاقت بلوچ نے وفد کی طرف سے تاثرات بھی قلمبند کیے۔اس موقع پر گفتگو کرتے ہوئے لیاقت بلوچ نے کہا کہ چینی اساتذہ،انجینئرز اور ہنر مندوں کے قتل پر ہم نہایت افسردہ ہیں اوردہشت گردی کے ان واقعات کی ہم مذمت کرتے ہیں۔ ہم پاکستان کی تمام مذہبی جماعتوں کی طرف سے چینی عوام اور اس کی قیادت کی خدمت میں تعزیت پیش کرنے کے لیے آئے ہیں، البتہ ایسے افسوسناک واقعات خود پاکستانیوں کے خلاف بھی ہوتے رہتے ہیں ۔ ہماری رائے میں عالم اسلام اور چین کے بڑھتے ہوئے تعلقات استعماری طاقتوں کو گوارا نہیں جبکہ ہم ان تعلقات کو بہت اہم سمجھتے ہیں۔ کشمیر کے لیے چین کی حمایت کو ہم بہت قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں۔ چین اس وقت دنیا میں عالمی سامراج کے مقابلے پر ایک نئی اقتصادی قوت کے طور پر ابھر رہا ہے جسے عالم اسلام بھی اپنے لیے تقویت کا باعث سمجھتا ہے۔ ینگ ناؤ نے ملی یکجہتی کونسل کے وفد کو خوش آمدید کہا۔ انھوں نے بتایا کہ وہ عالم اسلام کے مختلف ممالک کا دورہ کر چکے ہیں جن میں سعودی عرب اور ایران بھی شامل ہیں۔انھوں نے اسلام کے بارے میں منفی پروپیگنڈے کی مخالفت کی۔ انھوں نے کہا کہ کورونا کے مسائل ختم ہو جائیں تو ہم آپ کو بھی چین آنے کی دعوت دیں گے۔