مزید خبریں

Jamaat e islami

ملکی تاریخ کی سب سے بڑی قومی رضا کار مہم کا آغاز کررہے ہیں،سراج الحق

دیر/ لاہور(نمائندگان جسارت)امیر جماعت اسلامی سراج الحق نے اعلان کیا ہے کہ جماعت اسلامی ملکی تاریخ کی سب سے بڑی قومی رضاکار مہم کا آغاز کرنے جا رہی ہے جس کے تحت 10 لاکھ افراد کو قدرتی آفات یا خدانخواستہ قومی ایمرجنسی کے دوران امدادی سرگرمیوں کے لیے تربیت دی جائے گی۔ سیلاب، زلزلہ اور کورونا کے تجربات سے ثابت ہو گیا کہ حکومتوں میں کام کرنے کی اہلیت نہیں، ڈیزاسٹرمینجمنٹ کے ادارے دیگر شعبوں کی طرح تباہی و بربادی کا شکار ہیں، متاثرین کی بحالی کے لیے سرکاری اور بیرونی امدادکرپشن کی نذر ہو جاتی ہے، سیلاب زدگان کی صورت حال سب کے سامنے ہے۔ قومی رضاکار مہم میں یونیورسٹیز اور کالجز کے طلبہ و طالبات کو خصوصی طور پر شامل کیا جائے گا۔ قوم حکمرانوں سے مایوس ہو چکی ہے، پی ڈی ایم ، پیپلزپارٹی اور پی ٹی آئی بری طرح ایکسپوز ہو گئی ہیں ان کے ہوتے ہوئے بہتری کی کوئی توقع نہیں۔ وڈیروں اور مافیاز کے کلبز پر مشتمل حکمران جماعتوں کو عوام کی فلاح و بہبود سے پہلے کوئی غرض تھی، اب ہے نہ آئندہ ہو گی۔ فرسودہ نظام سے نجات حاصل کرنے کا وقت آ گیا، قوم کے لیے فیصلہ کن لمحات ہیں، ملک کی ترقی، خوشحالی اور تعمیر کے لیے جماعت اسلامی واحد آپشن ہے، آزمائے ہوئے لوگوں کو آئندہ بھی موقع ملا تو ملک آگے کے بجائے پیچھے ہی جائے گا۔ وہ تیمرگرہ دیرپائن میں اعتراف خدمت رضا کار کنونشن سے خطاب کر رہے تھے۔ الخدمت فائونڈیشن نے تقریب کا اہتمام کیا۔ امیر ضلع دیرپائن اعزاز الملک افکاری، سابق ایم این اے صاحبزادہ یعقوب، سابق ایم پی اے سعید گل اور صدر الخدمت خیبر پختونخوا خالد وقاص بھی اس موقع پر موجود تھے۔سراج الحق نے کہا کہ حکمرانوں نے نوجوانوں کو مایوس کیا، نشے کا زہر تعلیمی اداروں میں پھیلا رہا ہے اور وفاقی اور صوبائی حکومتوں کو اس سے کوئی غرض نہیں ۔ حکمرانوں نے تعلیمی اداروں کو تباہ، تعلیم کو مہنگا کیا۔ ملک کے طول و عرض میں قائم سرکاری اسکولوں کی حالت قابل رحم ہے، انفرااسٹرکچر تباہ، چاردیواری غائب اور بچوں کو بیٹھنے کے لیے ٹاٹ تک دستیاب نہیں۔ دوسری جانب غریبوں کے لیے علاج کی سہولتیں نہیں، کہیں اسپتال نہیں، اگراسپتال ہے تو ڈاکٹر اور دوائی دستیاب نہیں۔ قومی معیشت کا حال سب کے سامنے ہے، زرمبادلہ کے ذخائر زیرو ہیں، جو پیسہ پڑا ہے وہ دوست ممالک سے عارضی بنیاد پر حاصل کیا گیا ہے۔ آئی ایم ایف سے نویں قسط کے لیے ترلے کیے جا رہے ہیں۔ موجودہ اور ماضی کی حکومتوں کی غلط اور بے تکی پالیسیوں کی وجہ سے آج ملک کی یہ حالت ہے۔ بے روزگاری عام اور غربت کا جن بے قابو ہے۔ اشیا خورونوش کی قیمتوںمیں ہر روز اضافہ ہو رہا ہے، غریب اور متوسط طبقے کے لیے گزر بسر ناممکن ہو گئی، مہنگائی کے ساتھ ساتھ بدامنی نے بھی عوام کی زندگی کو اجیرن بنا دیا ہے۔امیر جماعت نے کہا کہ الخدمت فائونڈیشن سیاسی وابستگیوں سے بالاتر، پوری قوم کی نمائندہ تنظیم ہے۔ الخدمت نے کسی بھی مشکل وقت میں خدمت کی اعلیٰ مثالیں قائم کیں۔ رنگ و نسل کی تفریق سے بالاتر ہو کر انسانیت کی مدد کرنا الخدمت فائونڈیشن کا مشن ہے۔ حالیہ سیلاب ہو یا کورونا کی وبا اورزلزلہ، الخدمت کے ہزاروں رضاکار دن رات ایک کر کے امدادی سرگرمیوں میں مصروف رہے، قوم نے الخدمت پر سب سے بڑھ کر اعتماد کیا، اوورسیز نے امداد اور عطیات کی صورت میں رقوم پہنچائیں۔ لوگوں کو الخدمت کی دیانت اور امانت پر مکمل بھروسہ ہے اسی لیے اپنی دولت اس کے حوالے کرتے ہیں، اگر قوم کو احساس ہو گیا کہ ان کا ووٹ روپے پیسے سے بھی زیادہ قیمتی ہے اور اس بے تحاشا قیمتی امانت کو ان لوگوں کے سپرد کرنا چاہیے جو ذمے دار، اہل اور ایمان دار ہوں اسی روز ملک میں حقیقی تبدیلی آئے گی۔