مزید خبریں

Jamaat e islami

شام میں ایندھن کی قلت سے معاشی بحران سنگین ہوگیا

دمشق (انٹرنیشنل ڈیسک) شام میں ایندھن کی قلت کے باعث معاشی بحران سنگین صورت اختیار کرگیا۔ عرب میڈیا کی رپورٹ کے مطابق اسدی حکومت ملک کے مشرق میں آئل فیلڈ کو کنٹرول نہیں کرتی ، اور امریکی اقتصادی پابندیاں بحیرہ روم کی ساحلی پٹی کے ذریعے بیرون ملک سے پیٹرولیم مصنوعات درآمد کرنے کی راہ میں بڑی رکاوٹ بن گئی ہیں۔ واشنگٹن میں قائم اٹلانٹک کونسل میں سیاست اور توانائی کے تجزیہ کار پال سلیوان کا کہنا ہے کہ نااہل حکومت عوام کو سہولیات فراہم کرنے میں ناکام ثابت ہوئی ہے اور ان دنوں تقریباً سب ہی شامی غریب ہو چکے ہیں۔ سردیوں کے آغاز کے ساتھ ہی بہت سے شامی باشندے حرارت حاصل کرنے کے لیے پرانے کپڑوں سمیت جو بھی ناکارہ چیز مل جائے جلاکر ایندھن کے طور پر استعمال کرتے ہیں۔ ذرائع ابلاغ کے مطابق ایندھن کی قلت کے باعث امریکی ڈالر کے مقابلے میں شامی پاؤنڈ کی ریکارڈ کم ہوئی جس کی وجہ سے حکومت کے زیر کنٹرول حصوں میں رہنے والے عام باشندوں کی زندگی مزید مشکل ہو گئی ہے۔شام کے ٹی وی پر معیشت سے متعلق خبروں میں ایندھن کے بحران اور اس کے نتیجے میں پیدا ہونے والی معاشی بدحالی پر بات کرنے سے گریز کیا جاتاہے ۔ اس کی بجائے وہ یورپ میں توانائی کی قلت اور قیمتوں میں اضافے پررپورٹنگ کرتے ہیں۔ ملک بھر میں کئی فیکٹریاں مبینہ طور پر بند ہو چکی ہیں ۔