مزید خبریں

۔2018 ء کے انتخابات میں پارٹی نے مجھے صوبائی نشست سے ہرایا ،شاہ محمود

ملتان (صباح نیوز) پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) کے وائس چیئرمین اور سابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے اپنی پارٹی سے شکوہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ 2018ء کا الیکشن مجھے میری پارٹی نے ہرایا ، میرے خلاف میری پارٹی نے ہی سازش کی ہے۔ملتان میں پی پی 217 کی انتخابی مہم کے دوران وہاڑی روڈ پر کارنر میٹنگ سے خطاب کرتے ہوئے شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ ایک سازش کے ذریعے انہیں 2018ء میں صوبائی اسمبلی کا الیکشن ان کی پارٹی نے ہی ہرایا ہے، جس کا وہ برملا اظہار کر چکے ہیں اور خان کو بھی بتا چکے ہیں۔پی ٹی آئی کے وائس چیئرمین نے مزید کہا کہ اگر وہ صوبائی اسمبلی کی نشست پر الیکشن جیت جاتے تو آج پنجاب کی یہ کیفیت نا ہوتی، ملتان اور جنوبی پنجاب کے حالات بھی بدل جاتے، پی پی 217والو جاگو، مجھے کیا فرق پڑا میں تو وزیر خارجہ بن گیا۔سابق وزیر خارجہ نے کہا کہ انہیں کہا گیا کہ مت لڑائو زین کو الیکشن ہار گیا تو بہت بے عزتی ہو گی، میں نے انہیں کہا کہ کچھ جنگیں ہوتی ہیں جو صرف جیت کے لیے ہی نہیں لڑیں جاتیں۔ دوسری طرف زین قریشی کا کہنا ہے کہ جہانگیر ترین اور علیم خان کے تناظر میں شاہ محمود قریشی نے یہ بات کی ہے۔ خیال رہے کہ 2018ء میں سابق وزیرخارجہ نے صوبائی اسمبلی کی سیٹ پی پی 217 پر الیکشن لڑا تھا تاہم وہ یہ سیٹ آزاد امیدوار شیخ سلمان نعیم سے ہار گئے تھے۔ اس وقت سے یہ باتیں زیر گردش کرتی رہی ہیں صوبائی الیکشن میں شاہ محمود قریشی کو ہروانے میں جہانگیر ترین کا ہاتھ تھا۔ الیکشن جیتنے کے بعد سلمان نعیم نے تحریک انصاف میں شمولیت اختیار کرلی تھی اور وہ جہانگیر ترین گروپ کا حصہ تھے، انہوں نے جہانگیر ترین کے کہنے پر وزیراعلیٰ پنجاب کے انتخاب کے دوران حمزہ شہباز کو ووٹ ڈالا جس پر الیکشن کمیشن نے سلمان نعیم سمیت 25 ایم پی ایز کی رکنیت ختم کردی تھی۔