مزید خبریں

حیدرآباد ،طلبہ و تعلیمی دشمن پالیسیوں کیخلاف طلبہ تنظیموں کا احتجاج

حیدرآباد(اسٹاف رپورٹر) سندھ حکومت کی طلبہ وتعلیمی دشمن پالیسیوں کے خلاف مختلف طلبہ تنظیموں جن میں ریولیشنری اسٹوڈینٹس فرنٹ، رپوگریسو اسٹوڈنٹس فیڈریشن،س ندھ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن، سندھی شاگر تحریک ودیگرشامل ہیں نے اپنے مسائل کے حل کے لیے حیدرآباد اسٹوڈنٹس الائینز کے قیام کا اعلان کردیا یہ اعلان حیدرآباد اسٹو ڈنٹس الائنس کے کنوینئر نواب چانڈیو نے حیدرآباد پریس کلب میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر وجدان سیال، سمیع ابڑو، انصار باغی، ساگر، الطاف حسین ودیگر بھی موجود تھے نواب چانڈیو نے کہاکہ حکومت نے طلبہ کے لیے تعلیمی اداروں کو جیل بنادیا ہے اور کوئی طالب علم اپنے ساتھ ہونے والی ناانصافی اور زیادتی کے خلاف آواز نہیں اٹھا سکتا یونیورسٹیز میں روزانہ طالبات کو جنسی حراساں کیاجاتا ہے جس کی وجہ سے وہ مبینہ طور پر خود کشیاں کررہی ہیں جبکہ انتظامیہ اور حکومت کوئی اقدام کرنے کو تیار نہیں ہے انہوںنے کہا کہ ان ہی ظلم وزیادتی کے خلاف مختلف طلبہ تنظیموں نے ایک مشترکہ پلیٹ فارم قائم کیا ہے تاکہ اپنے حقوق اور تحفظ کی جدوجہد کی جائے۔ انہوں نے حکومت سے مطالبہ کیا کہ طلبہ یونیز پر فی الفور پابندی کا خاتمہ کیاجائے حیدرباد کی یونیورسٹی اور کالجز میں طلبہ وطالبات کی رہائشی کے لئے ہاسٹل قائم کیے جائیں تعلیمی اداروں کو قومی تحویل میں لے کر ہر سطح پر مفت تعلیم فراہم کی جائے طالبات کو حراساں کرنے کے واقعات کی روک تھام کے لیے اداروں میں طلبہ کو شامل کرکے کمیٹیاں قائم کی جائیں یونیورسٹی کے پاس طلبہ کو بے روزگاری الاؤنس دیا جائے اور یونیورسٹیز سمیت تعلیمی اداروں کو جدید سائنسی آلات سے آراستہ کیاجائے ۔