مزید خبریں

حیسکو :مرحوم ملازمین کے اہل خانہ میں چیک تقسیم

حیدرآباد(اسٹاف رپورٹر)شہید اور مرحوم ملازمین کے اہل خانہ کی دادرسی کرنا ادارے اور یونین کے فرائض میں شامل ہے، بیوہ خواتین کو یونین کی بدولت مراعات حاصل ہورہی ہیں یونین نے پرائم منسٹر اسکیم پیکج کو حیسکو میں لاگو کرایا جس میں دوران ملازمت انتقال کرجانے والے وہ ملازمین جو طبعی موت سے یا شہادت سے انتقال کریں گے ان کی بیوہ کو اس پیکج کے تحت لم سم امدادی پیکج دیا جائے گا جس میں ایک بڑی خطیر رقم پلاٹ کی خریداری کے لیے مختص ہے آج یہاں ہم اسی سلسلے میں آپریشن ڈویژن پھلیلی حیسکو کی ان بیوہ خواتین کو امد ادی چیک تقسیم کررہے ہیں جن کے شوہر اب اس دنیا میں موجود نہیں رہے۔ ان خیالات کا اظہار آل پاکستان واپڈا ہائیڈرو الیکٹرک ورکرز یونین سی بی اے کے مرکزی صدر عبداللطیف نظامانی نے پھلیلی ڈویژن میں بیوہ خواتین کو 20لاکھ سے 50لاکھ روپے خطیر چیک تقسیم کے موقع پر تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر ایکسین پھلیلی ڈویژن حیسکو سید نبی شاہ، صوبائی جنرل سیکرٹری اقبال احمد خان ، اعظم خان ،محمد حنیف خان، ریحان اقبال قائمخانی، الادین قائمخانی، نوراحمد نظامانی، حامد قائمخانی، ہاشم علی، شفیق بابو کے علاوہ R.O جلال راجپوت، ایس ڈی او اسٹور عبدالغنی پاٹولی، ڈویژنل چیئرمین پھلیلی عبدالمنان قائمخانی، ساجد قائمخانی ،ارشد تقوی، بدر شیروانی ، رفیق بھٹی، عمران ، زاہد ، اکبر میمن، فیروز دیسوالی، فیصل کے کے، سلمان ، آصف کے کے ، اکرام قریشی و دیگر عہدیداران و کارکنان بھی کثیر تعداد میں موجود تھے۔ تقریب میں عبدالرسول چنا، عبدالستار ، خورشید احمد، شکیل احمد، شبیر احمد، محمد رفیق ، محمد سلیمان کی بیوائوں کو چیک دیے۔ اس موقع پر صدر یونین نے مزید بتایا کہ ان کے علاوہ 27لاکھ ابھی کئی خواتین کو اور بھی دینے ہیں اس کے علاوہ یونین نے بیواہ گرانٹ جو پہلے 1750/- روپے ملتی تھی اسے بڑھاکر اسکیل کے مطابق 15000/- تک کرادیا گیا جہاں تک حادثات کی بات ہے تو صرف دو ماہ میں پھلیل میں 3حادثات ہوچکے ہیں لہذا ضروری ہے کہ حادثات کو روکنے کے لیے معیاری ٹی اینڈ پی دلائی جائے جبکہ گزشتہ شب ہالا روڈ گرڈ اسٹیشن پر حادثے کے مرتکب افسران و عملے کو معطل کیا جا چکا ہے ۔ اس موقع پر ایکسین پھلیلی سید نبی شاہ نے یونین کے اور قائدین کے کردار کو سراہا جن کے باعث ایسے قوانین بنائے گئے جس سے حاضر سروس، ریٹائر اور انتقال کرجانے والے ملازمین اہل خانہ استفادہ حاصل کررہے ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ ہم نے اپنی ڈویژن میں صارفین کو کہا ہے کہ وہ کم ازکم کرنٹ بجلی کا بل ادا کرکے بجلی کی روانی کو جاری رکھیں انہوں نے کہا کہ ہم سب کی کوششوں سے ہماری ڈویژن میں ریکوری کا گراف 38 فیصد سے بڑھ کر ڈبل ہوچکا ہے جبکہ بجلی چوری ، کنڈہ سسٹم کے لیے بھرپور کام کیا جارہا ہے ہمارے ملازمین کو سیاسی مداخلت ، دہشت گردی کا بھی سامنا ہے ہمارا مطالبہ ہے کہ ہمیں قانونی تحفظ دیا جائے۔